پہلے روز

تھمائے بابو کو جب ہم نے دام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

ہمارا ہو گیا فی الفور، کام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

کیا نہ کوئی بھی سروس میں کام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

نیاز! کھایا ہے ہم نے حرام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

تمام عمر رہا وہ غلام ، بیگم کا

بنا سکا نہ جو اس کو غلام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

وہ کاما ڈال رہی ہے کہیں، نہ فُل اسٹاپ

نہیں جو کرتی تھی مجھ سے کلام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

بنا ہوا ہے مرا باس اس لیے دشمن

نہ کر سکا تھا میں اس کو سلام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

مجھے وہ چھوڑ کے جاتی نہ اپنے میکے کو

اگر سناتا نہ اس کو کلام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

ہمیشہ اس کا میاں ، بے لگام رہتا ہے

نہیں جو ڈالتی اس کو لگام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

یہ ساس ، خون کے آنسو تجھے رُلائے گی

جو کر رہی ہے ترا احترام ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے روز

(نیاز سواتی)

<<< پچھلا صفحہ اگلا صفحہ >>>

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔


اپنی قیمتی رائے سے آگاہ کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

Shoaib Saeed Shobi. تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.