ایک آرزو

ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﻣﺤﻔﻠﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﮐﺘﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ ﯾﺎ ﺭﺏ
ﮐﯿﺎ ﻟﻄﻒ ﺍﻧﺠﻤﻦ ﮐﺎ ﺟﺐ ﺩﻝ ﮨﯽ ﺑﺠﮫ ﮔﯿﺎ ﮨﻮ

ﺷﻮﺭﺵ ﺳﮯ ﺑﮭﺎﮔﺘﺎ ﮨﻮﮞ ، ﺩﻝ ﮈﮬﻮﻧﮉﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﺍ
ﺍﯾﺴﺎ ﺳﮑﻮﺕ ﺟﺲ ﭘﺮ ﺗﻘﺮﯾﺮ ﺑﮭﯽ ﻓﺪﺍ ﮨﻮ
ﻣﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﺧﺎﻣﺸﯽ ﭘﺮ ، ﯾﮧ ﺁﺭﺯﻭ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﯼ
ﺩﺍﻣﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﮦ ﮐﮯ ﺍﮎ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺳﺎ ﺟﮭﻮﻧﭙﮍﺍ ﮨﻮ
ﺁﺯﺍﺩ ﻓﮑﺮ ﺳﮯ ﮨﻮﮞ ، ﻋﺰﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﺩﻥ ﮔﺰﺍﺭﻭﮞ
ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﻏﻢ ﮐﺎ ﺩﻝ ﺳﮯ ﮐﺎﻧﭩﺎ ﻧﮑﻞ ﮔﯿﺎ ﮨﻮ
ﻟﺬﺕ ﺳﺮﻭﺩ ﮐﯽ ﮨﻮ ﭼﮍﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﭼﮩﭽﮩﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﭼﺸﻤﮯ ﮐﯽ ﺷﻮﺭﺷﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺟﺎ ﺳﺎ ﺑﺞ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ
ﮔﻞ ﮐﯽ ﮐﻠﯽ ﭼﭩﮏ ﮐﺮ ﭘﯿﻐﺎﻡ ﺩﮮ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ
ﺳﺎﻏﺮ ﺫﺭﺍ ﺳﺎ ﮔﻮﯾﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺟﮩﺎﮞ ﻧﻤﺎ ﮨﻮ
ﮨﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﮐﺎ ﺳﺮﮬﺎﻧﺎ ﺳﺒﺰﮮ ﮐﺎ ﮨﻮ ﺑﭽﮭﻮﻧﺎ
ﺷﺮﻣﺎﺋﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺟﻠﻮﺕ ، ﺧﻠﻮﺕ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺍﺩﺍ ﮨﻮ
ﻣﺎﻧﻮﺱ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﮨﻮ ﺻﻮﺭﺕ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﻠﺒﻞ
ﻧﻨﮭﮯ ﺳﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﮭﭩﮑﺎ ﻧﮧ ﮐﭽﮫ ﻣﺮﺍ ﮨﻮ
ﺻﻒ ﺑﺎﻧﺪﮬﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺟﺎﻧﺐ ﺑﻮﭨﮯ ﮨﺮﮮ ﮨﺮﮮ ﮨﻮﮞ
ﻧﺪﯼ ﮐﺎ ﺻﺎﻑ ﭘﺎﻧﯽ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﻟﮯ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ
ﮨﻮ ﺩﻝ ﻓﺮﯾﺐ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﮩﺴﺎﺭ ﮐﺎ ﻧﻈﺎﺭﮦ
ﭘﺎﻧﯽ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﺝ ﺑﻦ ﮐﺮ ﺍﭨﮫ ﺍﭨﮫ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮨﻮ
ﺁﻏﻮﺵ ﻣﯿﮟ ﺯﻣﯿﮟ ﮐﯽ ﺳﻮﯾﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﻮ ﺳﺒﺰﮦ
ﭘﮭﺮ ﭘﮭﺮ ﮐﮯ ﺟﮭﺎﮌﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﯽ ﭼﻤﮏ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ
ﭘﺎﻧﯽ ﮐﻮ ﭼﮭﻮ ﺭﮨﯽ ﮨﻮ ﺟﮭﮏ ﺟﮭﮏ ﮐﮯ ﮔﻞ ﮐﯽ ﭨﮩﻨﯽ
ﺟﯿﺴﮯ ﺣﺴﯿﻦ ﮐﻮﺋﯽ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮨﻮ
ﻣﮩﻨﺪﯼ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺳﻮﺭﺝ ﺟﺐ ﺷﺎﻡ ﮐﯽ ﺩﻟﮭﻦ ﮐﻮ
ﺳﺮﺧﯽ ﻟﯿﮯ ﺳﻨﮩﺮﯼ ﮨﺮ ﭘﮭﻮﻝ ﮐﯽ ﻗﺒﺎ ﮨﻮ
ﺭﺍﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﭼﻠﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺭﮦ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﮭﮏ ﮐﮯ ﺟﺲ ﺩﻡ
ﺍﻣﯿﺪ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﯿﺮﺍ ﭨﻮﭨﺎ ﮨﻮﺍ ﺩﯾﺎ ﮨﻮ
ﺑﺠﻠﯽ ﭼﻤﮏ ﮐﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮐﭩﯿﺎ ﻣﺮﯼ ﺩﮐﮭﺎ ﺩﮮ
ﺟﺐ ﺁﺳﻤﺎﮞ ﭘﮧ ﮨﺮ ﺳﻮ ﺑﺎﺩﻝ ﮔﮭﺮﺍ ﮨﻮﺍ ﮨﻮ
ﭘﭽﮭﻠﮯ ﭘﮩﺮ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﻞ ، ﻭﮦ ﺻﺒﺢ ﮐﯽ ﻣﺆﺫﻥ
ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮨﻢ ﻧﻮﺍ ﮨﻮﮞ ، ﻭﮦ ﻣﯿﺮﯼ ﮨﻢ ﻧﻮﺍ ﮨﻮ
ﮐﺎﻧﻮﮞ ﭘﮧ ﮨﻮ ﻧﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﯾﺮ ﻭﺣﺮﻡ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﮞ
ﺭﻭﺯﻥ ﮨﯽ ﺟﮭﻮﻧﭙﮍﯼ ﮐﺎ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺳﺤﺮ ﻧﻤﺎ ﮨﻮ
ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺁﺋﮯ ﺟﺲ ﺩﻡ ﺷﺒﻨﻢ ﻭﺿﻮ ﮐﺮﺍﻧﮯ
ﺭﻭﻧﺎ ﻣﺮﺍ ﻭﺿﻮ ﮨﻮ ، ﻧﺎﻟﮧ ﻣﺮﯼ ﺩﻋﺎ ﮨﻮ
ﺍﺱ ﺧﺎﻣﺸﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺍﺗﻨﮯ ﺑﻠﻨﺪ ﻧﺎﻟﮯ
ﺗﺎﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﻗﺎﻓﻠﮯ ﮐﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﺻﺪﺍ ﺩﺭﺍ ﮨﻮ
ﮨﺮ ﺩﺭﺩﻣﻨﺪ ﺩﻝ ﮐﻮ ﺭﻭﻧﺎ ﻣﺮﺍ ﺭﻻ ﺩﮮ
ﺑﮯ ﮨﻮﺵ ﺟﻮ ﭘﮍﮮ ﮨﯿﮟ ، ﺷﺎﯾﺪ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺟﮕﺎ ﺩﮮ
ﻋﻼﻣﮧ ﻣﺤﻤﺪ ﺍﻗﺒﺎﻝ

<<< پچھلا صفحہ اگلا صفحہ >>>

ایک آرزو پہ 2 تبصرے ہو چکے ہیں

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔


Shoaib Saeed Shobi. تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.